Home  
    Mayor  
    Deputy Mayor  
    Metropolitan Commissioner  
    Departments  
    KMC Directory  
    Photo Gallery  
    Video Gallery  
       
 
 
       
    Tender Information  
    KMC Function  
    Tenders  
    Grand Auctions  
    Section 144 CR.P.C  
    Notifications  
    KMC Resolution  
       
 
 
       
    Public Notice  
    Information  
    National Holidays  
    Prayer Timings  
    Archive  
       


 
 
 
 
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ اختیارات اور مسائل کی صورتحال کافی عرصے سے خراب چل رہی ہے، ہمیں کراچی کے حوالے سے اپنی آواز بلند کرنی ہوگی-  
     
  05-Aug-2017  
     
   
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ اختیارات اور مسائل کی صورتحال کافی عرصے سے خراب چل رہی ہے، ہمیں کراچی کے حوالے سے اپنی آواز بلند کرنی ہوگی، میرا دل چاہتا ہے کہ یہاں پر قانون کی پاسداری ہو، شہری اپنی ذمہ داریوں سے آگاہ ہوں، ٹریفک کے قوانین پر مکمل پابندی کی جائے، شہر میں تمام بنیادی سہولتیں تمام طبقات کو ملیں، کراچی میں دبئی کی طرح عمارتیں کھڑی ہوں، لاہور اور اسلام آباد بن رہا ہے، میں یہاں تنہا شہر کی جنگ لڑرہا ہوں، شہر کی بہتری کے لئے ہمیں ذمہ داری لینی ہوگی، یہ بات انہوں نے ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈویلپرز(آباد) کے دفتر میں منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی، اس موقع پر آباد کے چیئرمین محسن شیخانی ، سینئر نائب صدر محمد حسن بخشی،احمد اویس تھانوی اور دیگر عہدیداروں کے علاوہ آباد کے ممبران کی ایک بڑی تعداد بھی موجود تھی، میئر کراچی نے کہا کہ میں لوکل گورنمنٹ اور ہاؤسنگ کا وزیر رہ چکا ہوں اس لئے میری نظر پورے کراچی پر ہے، کس نے چائنا کٹنگ کی ہے ہمیں بھی پتہ ہے، انہوں نے کہا کہ یہاں ہزار گز کے پلاٹ پر آٹھ یونٹ بن جاتے ہیں جبکہ پانی ، بجلی ، گیس سمیت دیگر یوٹیلیٹیز کا کیا ہوگا، یہ سوچنے کے لئے صرف میں ہی رہ گیا ہوں، پانی کی غیرمنصفانہ تقسیم ہو رہی ہے، شہر کو 95 فیصد آلودہ پانی فراہم کیا جا رہا ہے اور شہریوں کی صحت سے کھیلا جارہا ہے، میئر کراچی نے کہا کہ مجھے خدشہ ہے کہ شہری پانی کے مسئلے پر ایک دوسرے سے دست و گریباں نہ ہوجائیں اور سب جانتے ہیں کہ پانی بنیادی ضرورت میں شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں شہر کی بہتری کیلئے کوئی بھی قدم اٹھتا ہوں تو مجھے شدید رکاٹوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے، شہر میں مخدوش عمارتیں گر رہی ہیں سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کی توجہ میں نے ہی اس جانب مبذول کراکے انہیں جگایا، انہوں نے کہاکہ کراچی میںپانی کی تقسیم کا نظام ہی غلط ہے، سیوریج کا نظام جب تک ٹھیک نہیں ہوگا بلڈنگز اور سڑکیں بنانے کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا، یہاںبرساتی نالے کچرے سے بھرے ہوئے ہیں، چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری اور فیڈریشن آف پاکستان کامرس اینڈ انڈسٹری والے اپنے مسائل کے حل کے لئے اسلام آباد جاتے ہیں،کراچی کی حالت زار اور مسائل کے حل کے لئے بھی اسلام آباد جائیں۔ ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈویلپرز(آباد) کے چیئرمین محسن شیخانی نے کہا کہ آباد کاری کے شعبے میں دنیا بہت ترقی کرچکی ہے، کراچی میں دو طرح کی تعمیرات ہورہی ہیں، ایک قانونی اور دوسری غیرقانونی، غیر قانونی تعمیرات کو یوٹیلیٹیز مل جاتی ہے جبکہ قانونی کام کرنے والوں کو پریشانی کاسامنا کرنا پڑتا ہے، انہوں نے کہاکہ آباد عمارتوں میں پورشن بنانے کے کام کی حمایت نہیں کرتا بلکہ ہم شہر کو بہتر کرنا چاہتے ہیں، چیزوں کو آسان نہیں بنایا گیا تو کام بہتر نہیں ہوسکے گا، ہم کراچی کو بھی خوبصورت شہر بنانا چاہتے ہیں، انہوں نے کہاکہ شہر میں 52 فیصد کچی آبادی ہے، کچی آبادی ایک بڑا مسئلہ ہے جسے حل کرنے کے لئے 2ملین مکانات کی ضرورت ہے، انہوں نے کہا کہ یوٹیلیٹیز کا انتظام بلڈرز خود کررہے ہیں،حکومت ہمیں بتا دے یہاں تعمیرات نہ کریں تو نہیں کرینگے، انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی کمپنیز پاکستان میں آرہی ہیں، تعمیرات کے شعبہ میں بہت مواقع ہیں اس شعبہ میں بہتری آنے پر شہر میں روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے۔اس موقع پر میئر کراچی نے چوتھی عالمی آباد ایکسپو کا بھی افتتاح کیا ۔  
     
     
 
News Photo Gallery
 
 
 
 
 
 
 
 
 

 
     
     

 

 

 

 

 
 
     
 

Copyright © 2011-2012 Karachi Metropolitan Corporation. All rights reserved.
The KMC will not be responsible for the content of external internet sites. / Login  / Webmail  / Webmail 2  / 1339 Executive Dashboard