Home  
    Mayor  
    Deputy Mayor  
    Metropolitan Commissioner  
    Departments  
    KMC Directory  
    Photo Gallery  
    Video Gallery  
       
 
 
       
    Tender Information  
    KMC Function  
    Tenders  
    Grand Auctions  
    Section 144 CR.P.C  
    Notifications  
    KMC Resolution  
       
 
 
       
    Public Notice  
    Information  
    National Holidays  
    Prayer Timings  
    Archive  
       


 
 
 
 
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ کوئی ایک شخص مجھ سے حساب نہیں مانگ سکتا، حکومت کا پیسہ ہے جو اسکیموں پر خرچ کیا جارہا ہے اگر کوئی غلط کام ہوگا تو اس کی تحقیقات اور حساب کے لئے حکومتی ادارے موجود ہیں-  
     
  03-Mar-2018  
     
   
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ کوئی ایک شخص مجھ سے حساب نہیں مانگ سکتا، حکومت کا پیسہ ہے جو اسکیموں پر خرچ کیا جارہا ہے اگر کوئی غلط کام ہوگا تو اس کی تحقیقات اور حساب کے لئے حکومتی ادارے موجود ہیں، میرے خلاف جو لگ باتیں کررہے ہیں وہ باتوں کے بجائے کراچی کے مسائل کے حل میں میرا ساتھ دیں، باتیں بنانا آسان ہے یہ کام میں بھی کرسکتا ہوں لیکن میں عملی کام کرنا چاہتا ہوں، یہ بات انہوں نے گلزار ہجری اسکیم 33 میں کئے جانے والے ترقیاتی کاموں اور سڑک کی استرکاری کے دورے کے موقع پر کہی، ضلع شرقی کے چیئرمین معید انور، وائس چیئرمین عبدالرئوف خان، یوسی 27چیئرمین احترام الحق، ڈائریکٹر جنرل ورکس شہاب انور اور دیگر افسران بھی ان کے ہمراہ تھے، اس موقع پر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے میئر کراچی نے کہا کہ کراچی کے ایشو بہت ہیں ان کا مستقل حل چاہئے، عوام کو ریلیف دینا چاہتے ہیں اور مجھے لگتا ہے کہ ان کاموں سے عوام کو ریلیف مل رہا ہے، یہ اسکیم 33 جو 2012 سے نظر انداز ہے اور یہاں ترقیاتی کام نہیں ہورہے تھے ہم نے یہاں کے ترقیاتی کاموں کوکرنا شروع کیا اور یہ ایک کلومیٹر کی سڑک آج اس کی استر کاری مکمل کرلی جائے گی یہ سڑک گلزار ہجری سے بکرا منڈی جاتی ہے اور جو لوگ عید الالضحیٰ پر سفر کریں گے انہیں ریلیف ملے گا، انہوں نے کہا کہ میرے خلاف جن لوگوں نے نعرے لگائے ہیں سن کر افسوس ہوا یہ کام میں بھی کرسکتا ہوں لیکن یہ اچھی بات نہیں ہے انسان کو نبھانا آنا چاہئے مجھے کسی وضاحت کی ضرورت نہیں میرا کام سب کے سامنے ہے، میئر کراچی نے کہا کہ شہر کی یونین کونسلوں میں ترقیاتی کام جاری ہیں اور اب روزانہ کی بنیاد پر شہریوں کے سامنے آتے جارہے ہیں، انہوں نے کہا کہ کے ایم سی کو جو بجٹ ملتا ہے اس کے تحت اسکیمیں بنائی جاتی ہیں اور کے ایم سی دو کروڑ روپے سے زیادہ کی اسکیم نہیں بناسکتی تمام بڑے بڑے پروجیکٹس سندھ گورنمنٹ نے اپنے پاس رکھے ہوئے ہیں اور یہ شہریوں کے ساتھ زیادتی کے مترادف ہے دنیا بھر میں بلدیاتی ادارے ہی اپنے اپنے شہروں کی ترقی کے لئے کام کرتے ہیں اور صفائی ستھرائی کی ذمہ داری بھی بلدیاتی اداروں کی ہوتی ہے لیکن حکومت سندھ دنیا بھر سے الگ تھلک طریقے سے فرائض انجام دے رہی ہے وسائل، اختیارات اور حقوق کو غضب کرنا کہاں کا طریقہ کار اور انصاف ہے انہوں نے کہا کہ شہری بخوبی علم رکھتے ہیں کہ یہ کراچی کے ساتھ نا انصافی اور بد دیانتی کی جارہی ہے اس کے وسائل کہیں اور خرچ کئے جارہے ہیں اربوں کھربوں روپے ریونیو کی مد میں دینے والے شہر کے مکین پانی کو ترس رہے ہیں سیوریج کے مسائل سے دوچار ہیں اور کراچی کچرے کا ڈھیر بنا ہوا ہے، میئر کراچی نے کہا کہ اربوں روپے کی لاگت سے تین تین چار چار کلومیٹر کی سڑکیں سالوں میں تعمیر کی جارہی ہیں جس سے کراچی کی ترقی ناممکن ہے انہوں نے کہا کہ کراچی کے لئے فوری ایسے پیکیج کی ضرورت ہے جس سے کراچی کے مسائل کو حل کیا جاسکے،  
     
     
   
     
     

 

 

 

 

 
 
     
 

Copyright © 2011-2012 Karachi Metropolitan Corporation. All rights reserved.
The KMC will not be responsible for the content of external internet sites. / Login  / Webmail  / Webmail 2  / 1339 Executive Dashboard